0

Follow Arshad Orakzai, Hamid Mir and myvoiceTV on Twitter!

Here are some people we think you might like to follow:
Arshad Orakzai @orakzai_001
Followed by Qashqar
  Follow
Hamid Mir @HamidMirGEO
Followed by Muneeb Farooq and Meher Bokhari.
  Follow
myvoiceTV @myvoicetv
Followed by rehmani
  Follow

0

hayatwalishah@yahoo., see what’s new with Direct Messages on Twitter.

 
Discuss privately.
 
Tap and hold on a Tweet to share straight from your timeline via Direct Message. Spark conversations about breaking news, your favorite TV show, or today's trending meme.
 
Try now.
 
Go beyond your friends and family.
 
It's easier than ever to connect with anyone instantly. Use the Direct Message button on profiles to start conversations with both people and businesses on Twitter.

0

بلدیاتی انتخابات کو شفاف بنانے کی شدید ضرورت ہے۔سی ای (سی ڈی پی)ابراش خان

چترال(پ ر) کمیونٹی ڈیویلپمنٹ پروگرام (سی ڈی پی) کے چیف ایگزیکٹیوابراش خان اور کوارڈینیٹر جمشید خان نے کہاہے کہ 30۔مئی کومنعقد ہونے والے بلدیاتی انتخابات کو شفاف بنانے ، رائے دہندگان کی ذیادہ سے ذیادہ تعداد کو یقینی بنانے کی شدید ضرورت ہے کیونکہ معاشرے کے محروم اور پسماندہ طبقات کے پاس یہ ایک زرین موقع ہے کہ وہ اپنی مرضی سے اور اپنی مرضی اور امنگوں کے مطابق نمائندے منتخب کرکے فیصلہ سازی کے عمل میں شریک ہوسکیں۔ چترال پریس کلب میں میڈیا بریفنگ کے موقع پر انہوں نے کہاکہ ان کی تنظیم سی ڈی پی نے الیکشن کے اعلان کے ساتھ ہی اس سلسلے میں عوامی سطح پر سرگرمیوں کا آغاز کردیا تھا جس میں لوکل گورنمنٹ ایکٹ 2013ء کے بارے میں عوام میں شعور و آگہی پھیلاکر اس نئی بلدیاتی نظام کو سمجھنے میں مدد دینے سے لے کر امیدواروں کو کاغذات نامزدگی بھرنے اور سیاسی پارٹیوں کو تربیت مہیا کرنے کے ساتھ ساتھ ووٹروں کو مختلف بیلٹ پیپروں کی رنگوں سے شناسائی کرنے تک کے مراحل شامل تھے۔ انہوں نے کہاکہ سی ڈی پی نے پوسٹرز، لیف لیٹ، پمفلٹ، فلائرزچھپوا کرتقسیم کی تاکہ ووٹروں کو ذیادہ سے ذیادہ آگاہی حاصل ہوسکے اور وہ اپنا حق رائے دہی درست طریقے سے استعمال کرسکیں اور یہ مواد مختلف مقامات پر اسٹال لگا کر تقسیم کئے جارہے ہیں۔ ضلع چترال کے حوالے سے انہوں نے کہاکہ اس ضلعے میں انتخابی عمل میں چند ایک مسائل درپیش ہیں جن کو اگر بروقت دور کئے جائیں تو صورت حال بہتر ہوسکتی ہے۔انہوں نے کہاکہ 2013ء کے جنرل الیکشن میں چترال میں ووٹ ڈالنے کی شرح 60فیصد سے ذیادہ رہی جوکہ حوصلہ افزا بات ہے مگر کچھ علاقے اور پولنگ اسٹیشنوں میں یہ شرح اوسط سے بہت کم رہی جن کی بڑی وجہ پولنگ اسٹیشنوں کا دیہات سے دوری ہے جس کے لئے پولنگ اسٹیشن کی تعداد میں خاطر خواہ اضافے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے آنے والے انتخابات میں سات مختلف رنگوں میں بیلٹ پیپروں کی وجہ سے ممکنہ پیچیدگی کے حوالے سے کہاکہ اس وجہ سے ایک ووٹر کو ووٹ پول کرنے میں کئی کئی منٹ لگ سکتے ہیں جس کے نتیجے میں رش بڑھ سکتا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ خواتین ، بیماروں اور عمر رسیدہ افراد کواس وجہ سے پولنگ اسٹیشنوں کے اندر طویل انتظار کے دوران ٹھنڈاپانی ، بیت الخلاء ، بیٹھنے کے لئے مناسب جگہ وغیرہ سہولیات کی ضرورت ہنگامی بنیادوں پر فراہم کرنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہاکہ چترال کے سیاسی جماعتوں کے ساتھ ایک راونڈ ٹیبل کا انعقاد بھی کیا گیا جبکہ مقامی ایف ۔ایم ریڈیو کے ذریعے بھی ووٹروں کی تعلیم کا اہتمام کیا گیا ہے ۔ سی ڈی پی کے ذمہ داران نے میڈیا پر زوردیتے ہوئے کہاکہ میڈیا الیکشن سے متعلق مسائل کے حل کے حوالے سے اپنا کردار ادا کرے ۔ سی ڈی پی کے اسسٹنٹ ڈسٹرکٹ کوارڈینیٹر امین جان اور پریس کلب کے صدر محکم الدین نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ 

0

کرپشن اور دھوکا دہی کا دور ختم ہونے والا ہے۔ایم پی اے فوزیہ بی بی

چترال (آوازنیوز )ایم پی اے چترال فوزیہ بی بی نے کہا ہے ۔ کہ کرپشن اور دھوکا دہی کا دور ختم ہونے والا ہے ۔ کیونکہ عوام نے اُن لوگوں کو پہچان لیا ہے ۔ اور تیس مئی 2015اُن لوگوں کیلئے شکست کا دن ہو گا ان خیالات کا اظہار انہوں نے چترال ون سے تحریک انصاف کی طرف سے ڈسٹرکٹ کونسل کے امیدوار ونگ کمانڈر (ر) فرداد علی شاہ اور تحصیل کونسل کے امیدوار شجاع الرحمن کے لئے انتخابی مہم کے سلسلے میں منعقدہ ورکر کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔ اس موقع پر سینکڑوں کی تعداد میں پارٹی ورکرز اور عمائدین علاقہ موجود تھے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ ونگ کمانڈر فرداد علی شاہ بے داغ ماضی کے مالک تحریک انصاف کے امیدوار ہیں ۔ اوران میں بدعنوانی سے پاک عوام کی بے لوث خدمت کا جذبہ موجود ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ تحریک انصاف نے چترال ون میں ڈسٹرکٹ کونسل کیلئے بطور امیداور اُن کو نامزد کیا ہے ۔ اور انشااللہ نوجوانوں کے بھر پور تعاون سے ہم یہ سیٹ جیتنے میں کامیاب ہو ں گے ۔ انہوں نے کہا کہ جو لوگ پارٹی کے نامزدامیدوار کے ساتھ مد دکے وقت اُن کے خلاف کام کر رہے ہیں ۔ اُن کا تحریک انصاف سے کوئی تعلق نہیں ہے ۔ وہ دوسروں کے آلہ کار بن کر پارٹی کو نقصان پہنچانے کی کو شش کر رہے ہیں ۔ تاہم وہ پارٹی کے مخلص کارکنوں کو گمراہ نہیں کر سکتے ۔ اُنہوں نے کہا ۔ کہ تحریک انصاف چترال کو ترقی کی راہ پر گامزن کرکے اسے ایک نئے چترال کی صورت میں دیکھنا چاہتی ہے ۔ اس لئے نئے چترال کا خواب شرمندۂ تعبیر کرنے کیلئے عوام تحریک انصاف کے تمام امیدواروں کو اور خصوصا ونگ کمانڈر (ر ) فرداد علی شاہ کو کامیاب کریں ۔ نامزد امیدوار برائے ڈسٹرکٹ کونسل چترال ون فرداد علی شاہ نے اپنے خطاب میں کہا ۔ کہ اُن کو کسی بھی چیز کا لالچ نہیں ۔ وہ صرف قوم کی خدمت کا جذبہ لے کر اس الیکشن میں آئے ہیں ۔ اور وہ قوم کے ساتھ صاف اور کھری باتیں کرنے پر یقین رکھتے ہیں ۔قوم کے فنڈسے ایک پائی بھی اپنی ذات پر خرچ کرنے کا تصور نہیں کر سکتے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ بعض لوگ مذہب اور غریب کی ہمدردی کا نعرہ لگا کر اپنے مفادات کے حصول کی کوشش کررہے ہیں ۔ لیکن عوام اُن کے تمام مقاصد سے با خبر ہے ۔ اب وہ یہ حربے استعمال کرکے کسی کو دھوکا نہیں دے سکتے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ عوام نے اُن پر اعتماد کیا ۔ تو وہ اُن کو کبھی مایوس نہیں کریں گے ۔ اس موقع پر تحصیل کونسل کے امیدوار شجاع الرحمن نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا ۔ 

0

و گ کیا کہیں گے ‘‘

دھڑکنوں کی زبان
محمد جاوید حیات
 ہمیں کس بات کا خوف ہے اس با ت کا ہے نا !کہ لوگ کیا کہیں گے ۔یا اس بات کا کہ ہم تنہا رہ جائیں گے لیکن حقیقت میں ایسا کچھ نہیں ہے۔ سب لوگ ایک ہی بات نہیں کہیں گے ۔کچھ لوگ ایک بات کہیں گے دوسرے لوگ دوسری بات کہیں گے۔ مگر ہمیں کچھ کر نے کی جرائت نہیں ہوتی ۔کوئی چیز ہے جو ہمیں روکتی ہے۔ لوگ بہانے ہیں۔ بہت بڑے افیسر ہو وہ پنٹ شارٹ کی جگہ ڈھیلی ڈھالی کپڑے پہنا چاہے۔ داڑھی چھوڑنا چاہے، پگڑی باند ھنا چاہے، مگر سوچے کہ ایسا کر نے سے لوگ کیا کہیں گے تو چند لوگ ہونگے جو کہیں گے کہ افیسر'' افسر شاہی'' کے خلاف شخصیت بنائی ہے ۔فقیر ہے، کہ افیسر ہے ۔۔۔ مگر بہت سارے لوگ غش عش کراُ ٹھیں گے کہیں گے ،سنت رسول ﷺ کی پیروی کی ہے۔ سادگی اختیار کی ہے۔ دوسری قوموں کی اتباع چھوڑ دی ہے۔ عظیم بن گیا ہے۔ انسانیت کا احترام کرنے لگا ہے ۔مگر ہم ہیں کہ ایساکرنے کی جرا ء ت نہیں کرسکتے۔۔ سیاست دان ہے۔ کھری کھر ی سنائے گا، سچ بولے گا تو کچھ لوگ ملامت کریں گے ۔کہینگے کہ سیاست نہیں آتی۔ موقع شناس نہیں۔پارٹی کو نقصان پہنچایا ۔اپنا سیاسی کیر ئر تباہ کیا۔ بھولا بھلا ہے۔ سیاست کی شدبدھ سے بے خبر ہے ۔سیاسی لحاظ سے جھاٹ ہے۔ مگر بہت سارے لوگ کہیں گے سچا ہے ۔ایماندارہے۔ غیرت والا ہے ۔آمین شخص ہے۔ دوسروں کے حقوق سلب نہیں کرے گا۔ اُن کے وعدے پر اعتبار ہے۔ اُس کی باتیں کھری کھری ہیں ۔وہ مظلوں کا ساتھی ہے ۔وہی رہمنا بن سکتا ہے۔۔۔ ٹھیکدار ہے، کام پختہ کر ے کمیشن نہ لے نہ دیدے ،منافع سے بے نیاز ہو۔قومی پیسے کو امانت سمجھے ۔کچھ لوگ کہیں گے۔ اپنی جان کا دشمن ہے۔ اپنے مستقبل کو تباہ کر رہا ہے۔ جلد ڈوپ جائے گا ۔مگر اکثر لوگوں کا خیال ہوگا کہ یہ قوم کا محسن ہے ،یہ معمار ہے اس کاکام شاندارہے ۔یہ امانت دار ہے۔۔۔ استادہے۔ ایک منٹ بھی ضائع نہیں کرتا ،بارش اندھی میں دندناتا سکول کی طرف رواں ہے۔ امتحانی ڈیوٹی نہیں لیتا ۔ نقل نہیں کراتا ۔ اصولوں پر کمپرو مائز نہیں کرتا ۔تو کچھ لوگ کہیں گے پاکستان بنا رہا ہے ۔اپنے آپ کو صادق امین ثابت کرنے کے لئے دکھاوا کر رہا ہے ۔اکیلا کیا کر سکتا ہے اس کو دوست احباب کی فکر نہیں ۔ کیا اسے معاشرے میں نہیں رہنا مگر بہت لوگ کہیں گے۔ واحد استاد ہے ۔بے مثال ہے ۔ صحیح معمار قوم ہے ۔ اصول پرست ہے ۔اس کو آخرت کی فکر ہے ۔ اللہ اس کو بدلہ دے ۔۔۔عالم دین اللہ کا پیغام کھری کھری سنائے ۔ اسلام پر سختی سے عمل کرے۔ بے باک بے غرض ہو۔وقت کے طوفان کے آگے نہ جھکے۔ رسول مہربان ؐکی سنتوں پر کار بند ہو ۔کسی کو دین کے مقابلے میں خاطر میں نہ لا ئے ۔حق بات کہنے میں جھجھک محسوس نہ کرے۔ تو چند لوگ اس کی سخت گیری پہ خفا ہونگے ۔ مگر زمانہ اس کو یاد رکھے گا، اس کی تعریف کرے گا۔ بڑے بڑے ظالماں وقت اس کے سامنے جھک جائیں گے ۔ اس طرح معاشرے میں کوئی بھی طبقہ ، فرد واحد خواہ وہ آفیسر ہو ،باپ ہو، ماں ہو ، بیٹا ہو، ڈائیور ہو ، مالی ہو، راج مزدور ہو،جوبھی ہو اگر وہ ان اوصاف کا مالک ہے ۔تووہ بے شک معاشرے میں متعارف ہونے تک تنہا رہ جائے گا۔مگر زیادہ دیر تک تنہا نہیں رہے گا ۔آہستہ آہستہ زمانہ اس کے ساتھ چلے گا۔ وقت اس کو راستہ دے گا ۔ معاشرہ اس کو مقام دے گا ۔ زندگی پھول بن جائے گی ۔ وہ چمکتے تارے کی طرح چمکنے لگے گا ۔ ہم میں وہ جراء ت ، وہ قوت ، وہ پختہ ارادہ نہیں ۔ ہم اصولوں میں مصلحت کا شکار ہوتے ہیں ۔ ہم یہ نہیں سوچتے کہ ہر فرد ایک انجمن ہوتا ہے ۔ایک دنیا ایک کائنات ہوتا ہے۔ فخر موجودات ﷺ نے ''تم میں ہر ایک '' کہہ کر یہ گھتی سلجھا دی ہے فرمایا ۔ تم میں سے ہر ایک گلہ بان (ذمہ دار )ہے اور ہر ایک سے اُس کی ذمہ داری کے بارے میں پوچھا جائے گا ۔ اب اس ملک کی خدمت ، اس کی ترقی وخوشحالی اور اس کی حفاظت میں ہر ایک برابر کا شریک ہے اس کی سرحدوں کی حفاظت کی ذمہ داری صرف فوج ہی کی نہیں قوم کے ہر فرد کی ہے ۔ البتہ فوج آگے ہے ،قوم اس کے پچھے ہے۔ اس کے نظریات کی حفاظت صرف حکمرانوں کی ہی نہیں، حکمران آگے ہیں قوم ان کے پچھے ہے ان کے اثاثوں کی حفاظت سب کی ذمہ داری ہے۔ راہ میں موجود کانٹے سب کو ہٹانے ہیں ۔سڑک پر کیلے کا چھلکا سب کو باہر پھکنا ہے ۔گلی میں کاغذ کا ٹکڑا سب کو اٹھانا ہے ۔ اصولوں کی پابندی سب کو کرنی ہے ۔ اس خاک سے محبت سب کو کرنی ہے ۔ اس خاک کو آنکھوں کا سور ما سب کو بنانا ہے ۔سب لوگ یہی کریں، سب لوگ یہی سوچیں ۔ مگر ہم ہیں کہ آگے بڑھنے میں ہچکچاتے ہیں ۔ سچائی اور صداقت قربانی چاہتی ہے ۔ اصول قربانی چاہتے ہیں، رسمیں توڑنے میں دقت ہوتی ہے ۔پہچان بنانے میں مشکلات ہوتے ہیں ۔مگر ایک دفعہ یہ سب کچھ ہوجائیں تو مثالی بننے میں دیر نہیں لگتا۔ یہ ہماری مجبوریا ں نہیں ہماری کم ہمتی ہے ۔کہ ہم لوگوں کی نقل کرنے میں عار محسوس نہیں کرتے ۔اپنی پہچان بنانے سے ہچکچاتے ہیں۔ ہمارے سامنے روشن اور واضح راستے موجود ہیں، حق وصداقت کے راستوں سے اگر لوگوں کی باتیں ہمیں رو کیں تو پھر اس کو کیا نام دیا جائے۔
ہو صداقت کے لئے جس دل میں مرنے کی تڑپ
پہلے اپنے پیکر خاکی میں جان پیدا کرے ۔

0

نومنتخب صدر سردار ولی اور سرپرست اعلیٰ خورشید محمد کا تمام پیرامیڈیکس کا شکریہ

ترال ( پ ر) پیرا میڈیکل ایسو سی ایشن چترال کے نو منتخب صدر سردار ولی اور سرپرست اعلی خو رشید محمد نے ضلع بھر کے تمام پیرا میڈیکس کا شکریہ ادا کیاہے ۔ کہ انہوں نے الیکشن کے عمل کو پُر امن طریقے سے انجام دینے میں بھر پور تعاون کیا ۔ اور نئی کابینہ کو خدمت کا موقع فراہم کیا ۔ چترال پریس کلب میں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں کہا ۔ کہ الیکشن ایک جمہوری عمل ہے ۔ جو اداروں میں فعالیت اور بہتری لانے کے جذبے کے تحت منعقد کئے جاتے ہیں ۔ اور پیرامیڈیکس کا موجودہ الیکشن بھی اس سلسلے کی ایک کڑی ہے ۔ انہو ں نے کہا ۔ کہ ہم اُن تمام دوستوں کا شکریہ ادا کرتے ہیں ۔ جنہوں نے اپنا حق رائے دہی ہماری حمایت یا کسی وجہ کی بنیاد پر ہماری مخالفت میں استعما ل کیا ۔ کیونکہ مخالفت بھی کسی دلیل کے تحت ہی کی جاتی ہے ۔ انہوں نے کہا ہمار ا مطمع نظر اخلاقی اقدار کا پاس رکھتے ہوئے بہتر رویہ اپنا کر پیرا میڈیکس بھائیوں کے مسائل کے حل کیلئے جدو جہد کرناہے ۔ مجھے امید ہے اس حوالے سے تمام ساتھی میری مدد کریں گے ۔ اور ایک مثبت ماحول میں ہم مل کر عوام کی خدمت اور اپنے مسائل حل کرنے میں کامیاب ہو ں گے ۔ سردار ولی نے چیرمین پیرامیڈیکل ایسو سی ایشن سراج برکی اورصدر مالا کنڈ ڈویژن پیرا میڈیکل ایسو سی ایشن حاجی بشیر احمد کا خصوصی طور پر شکریہ ادا کیا ۔ کہ انہوں نے طویل اور دشوار گزار فاصلہ طے کرکے چترال آکر پُر امن اور شفاف طریقے سے الیکشن کے عمل کو انجام تک پہنچایا ۔ جس کیلئے وہ دونوں داد و تحسین کے مستحق ہیں ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ ضلع بھر کے 430پیرا میڈیکس کی خدمت کیلئے وہ کوئی دقیقہ فروگذاشت نہیں کریں گے ۔