0

Follow Arshad Orakzai, Hamid Mir and Asma Jahangir on Twitter!

     
hayatwalishah@yahoo.,
Some people you may know on Twitter.
 
     
Arshad Orakzai @orakzai_001
Followed by Qashqar.
Following: 349 · Followers: 115
Hamid Mir @HamidMirGEO
Journalist and author,host of current affairs show Capital Talk on Geo TV
Followed by Muneeb Farooq and 2 others.
Following: 181 · Followers: 1161785
Asma Jahangir @Asma_Jahangir
Asma Jahangir is a human rights lawyer based in Pakistan. She is a...
Followed by Asma Shirazi and 2 others.
Following: 1072 · Followers: 225426
Connect with others on Twitter.
Find more people you may know

0

Follow rehmani, charity: water and MN Farani on Twitter!

     
hayatwalishah@yahoo.,
Some people you may know on Twitter.
 
     
rehmani @rehmani21
Followed by Qashqar.
Following: 178 · Followers: 35
charity: water @charitywater
We're an NYC-based charity working in 22 developing countries around the...
Followed by Qashqar.
Following: 277801 · Followers: 1465884
MN Farani @enayab
Followed by Qashqar.
Following: 37 · Followers: 23
Connect with others on Twitter.
Find more people you may know

0

ہم نے اقتدار سنبھالنے کے بعد صوبے میں تعلیم ، صحت اور ترقیاتی منصوبوں میں کئی اصلاحات کیں ۔ محمودد خان

چترال ( نمایندہ آواز) صوبائی وزیر آبپاشی محمودد خان نے کہا ہے ۔ کہ ہم
نے اقتدار سنبھالنے کے بعد صوبے میں تعلیم ، صحت اور ترقیاتی منصوبوں میں
کئی اصلاحات کیں ۔ سو لہ ہزار اساتذہ کی کمی کو پورا کرنے کیلئے آٹھ ہزار
نئے اساتذہ بھرتی کئے ۔جون تک مزید اساتذہ کو بھرتی کیا جائے گا ۔ صحت
میں بھی حتی المقدور بہتری لائی گئی ہے ۔ اسی طرح ورکس ڈیپارٹمنٹ میں
کرپشن ختم کرنے کیلئے Eٹینڈر متعارف کرائے گئے ۔ جس سے بدعنوانی پر بہت
حد تک قابو پا لیا گیا ہے ۔ جبکہ عوام کو سہولیات فراہم کرنے اور آسانی
پیدا کرنے کیلئے قانون سازی کی گئی ہیں ۔ اور نچھلی سطح پر ترقی کو بار
آور بنانے کیلئے بلدیاتی الیکشن میں ویلج کونسل کا نیا نظام متعارف کیا
جا رہا ہے ۔ اس سے گاؤں کی سطح پر مسائل حل کرنے میں بہت مدد ملے گی ۔ وہ
ایون گاؤں میں ایس آر ایس پی کے زیر نگرانی تعمیر ہونے والے 700کلواٹ منی
ہائیڈل پراجیکٹ کے افتتاح کے موقع پر ایک بڑے اجتماع سے خطاب کر رہے تھے
۔ جس میں ایم پی اے سلیم خان ،کمشنر ملا کنڈ ڈویژن کفایت اللہ چیف
ایگزیکٹیو آفیسر ایس آر ایس پی شہزادہ مسعودالملک ،صدر تحریک انصاف چترال
عبدالطیف و دیگر موجود تھے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ صوبائی حکومت ، یورپین
یونین اور ایس آر ایس پی کا موٹو ایک ہے ۔ اور تینوں میرٹ اور شفافیت پر
یقین رکھتے ہیں ۔ یہی وجہ ہے ۔ کہ یورپین یونین ایک بڑے فنڈ کے استعمال
کیلئے ایس آر ایس پی اعتماد کیا ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ صوبائی حکومت ہر
گھرکو بجلی کی روشنی سے منور دیکھنا چاہتی ہے ۔ اس لئے ایم پی ایچ کا ایک
وسیع نیٹ ورک پھیلا دیا گیا ہے ۔اور چترال میں صوبائی حکومت کے منظور شدہ
فنڈ سے اے کے آر ایس پی ان ایم پی ایچ کی تعمیر کرے گا ۔ چیف ایگزیکٹیو
ایس آر ایس پی چترال شہزادہ مسعودالملک نے کہا ۔ کہ صوبائی اور مرکزی
حکومت کے بھر پور تعاون سے ایس آر ایس پی عوامی فلاح کے یہ کام کرنے کے
قابل ہے ۔ اس میں صوبائی حکومت کی مشاورت اور اُن کی سپورٹ نہ ہو تو یہ
منصوبے کسی صورت انجام نہیں دیے جا سکتے ۔ اس لئے میں دونوں حکومتوں کا
شکریہ ادا کرتا ہوں ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ 700کلوواٹ کے اس بجلی کی تعمیر
ویلج آرگنائزیشن کی زیر نگرانی مکمل ہوگی ۔ اور وہ ہی اس کی تمام منجمنٹ
کی ذمہ دار ہو گی ۔ اس بجلی گھر سے ساڑھے گیارہ سو گھرانے استفادہ کریں
گے ۔ اور اس پر نو کروڑ پچاسی لاکھ روپے لاگت آئے گی ۔ اس موقع پر ایم پی
اے سلیم خان نے ایون کے بجلی کے مسئلے کو حل کرنے پر ایس آر ایس پی کا
شکریہ ادا کیا ۔ اور صوبائی وزیر سے نہر آٹانی اور غوچھار کوہ کیلئے فنڈ
اور سٹاف کی فراہمی سے متعلق مطالبہ کیا ۔ تھرڈ ڈائیلاگ کے اجتماع سے
کمشنر ملاکنڈ ڈویژن کفایت اللہ نے جبکہ کمیونٹی کی طرف سے مولانا غلام
یوسف اور حاجی عبد الرحمن نے خطاب کیا ۔

0

ضلعی صدر نے صوبائی وزیر کے دورے سے ورکروں کو بے خبر رکھا/پی ٹی آئی کارکنان

ریشن( نمائندہ آواز) پاکستان تحریک انصاف سب ڈویژن مستوج کے عہدیداروں نے
صوبائی وزیرمحمود خان کے حالیہ دورے کے دوران انہیں بے خبر رکھنے پر ضلعی
صدر کی مذمت کی ہے۔ میڈیا کو جاری کئے گئے اپنے ایک مشترکہ بیان میں پی
ٹی آئی سب ڈویژن مستوج کے جنرل سیکرٹری ولی الرحمن، انصاف یوتھ ونگ کے
صدر ریٹائرڈ صوبیدار میجر میربہادر ،یو سی موڑکہو کے صدر جاوید حسین شاہ،
یو سی تریچ کے صدر علی احمد نے کہا کہ پارٹی کے صوبائی وزیر کا دورہ
چترال نہایت اہمیت کا حامل تھا اور اگر پارٹی کارکنان کو بروقت اطلاع
ملتی تو سب ڈویژن مستوج کے دورے کے دوران صوبائی وزیر کا شایان شان
استقبال کیا جاتا،وزیر صاحب کو عوام سے ملنے کا موقع ملتا جس سے انہیں
علاقے کے عوامی مسائل اور مشکلات سے آگاہی ہوتی مگر بجائے اسکے ضلعی صدر
عبدالطیف نے دانستہ طور پر کارکنان کو بے خبر رکھکر اپر چترال میں بے آب
وگیاہ جگہوں کا دورہ کرایا۔ انہوں نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس
وجہ سے پارٹی کارکنان میں بد دلی پھیل گئی ہے کیونکہ ضلعی صدر کا اس طرح
چھپ چھپا کر کام کرنا نا قابل فہم اور افسوسنا ک ہے۔ انہوں نے ضلعی صدر
کے اس رویے کی بھرپور مذمت کرتے ہوئے کہا کہ در حقیقت دانستہ طور پر
صوبائی وزیر کے دورے کو ناکام بنانے کی کوشش کی گئی۔

0

میٹرک کے امتحان میں نقل جیسی لعنت کو روکا جائے۔جوائنٹ سیکرٹری پی ٹی آئی سیف الرحمن مشکور

چترال( نمائندہ آواز)ضلع چترال میں میٹرک کے سالانہ امتحان میں نقل کرنا
معمول بن گیا ہے۔ پاکستان تحریک انصاف کے جوائنٹ سیکرٹری سیف الرحمٰن
مشکور ؔ نے اپنے ایک اخباری بیان میں کہا کہ ایک طرف حکومت خیبر پختونخوا
نے تعلیم کے فروغ اور اس میں اصلاحات لانے کے لئے دن رات کوشاں ہے مگر
دوسری طرف میٹرک و دیگر امتحانات میں ابھی تک نقل پر قابو نہیں پایا
جاسکا ہے ۔ اُمید ہے کہ خیبر پختونخواہ کی حکومت پاکستان تحریک انصاف کے
منشور اور چےئر مین عمران خان کے وژن کے مطابق محکمہ تعلیم میں اصلاحات
لانے میں کامیاب ہوجائیگی۔ اس سلسلے میں حکومت خیبر پختونخوا نے
Idependent Monitering Unit (IMU)تشکیل دی ہے تاکہ سرکاری سکولوں اور
اساتذہ کی کارکرگی کوبہتر بنایا جاسکے۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ ہر امتحانی
سنٹر کی نگرانی کون کریگا ؟ سرکاری سکولوں کے اکثر طلباء و طالبات پورے
سال محنت کئے بغیر نقل کی فکر میں پورے سال پڑھتے نہیں ہیں اور امتحان
میں نقل کرکے ہونہار اور محنتی طلباء و طالبات سے زیادہ نمبر حاصل کرتے
ہیں جس سے ہونہار طلباء کی حق تلفی ہوتی ہے ۔ہونہار اور محنتی طلباء
مایوس ہوکر پڑھائی چھوڑنے پر مجبور ہوجاتے ہیں ۔ مگر نقل کرنے والے طلباء
و طالبات وقتی طور پر کامیاب تو ہوجاتے ہیں مگر معاشرے کے لئے سود مند
ثابت نہیں ہوتے اور وہ NTS و دیگر مقابلے کے امتحانات میں ناکام ہوجاتے
ہیں۔ اس نقل میں ضلع چترال کے کُتب فروش بھی برابر کے شریک ہیں کیونکہ وہ
نقل کے لئے طلباء کو ہرقسم کے مواد فراہم کرتے ہیں مگر اُن سے پوچھنے
والا کوئی نہیں ہے کیونکہ ضلع کے ذمہ داران کی غیر ذمہ داری، لاپرواہی
اور غفلت کی وجہ سے اِن جرائم پر قابو نہیں پایا جاتا ہے۔ جس کی وجہ سے
PTI ضلع چترال کے ورکرز و عہدیداران میں تشویش پائی جاتی ہے ۔ اُنھوں نے
کہا PTI ضلع چترال کے تمام ورکرز و عہدیداران وزیر اعلیٰ خیبر پختونخواہ،
وزیر تعلیم، سیکرٹری تعلیم خیبر پختونخوا ,محکمہ تعلیم ضلع چترال اور
IMUکے ذمہ داران کے نوٹس میں یہ بات لانا چاہتے ہیں کہ ضلع چترال میں
امسال میٹرک اور F.A /F.Sc کے امتحانات میں نقل پر کنٹرول کیا جائے تاکہ
ضلع چترال میں تعلیمی معیار کو بہتر بنایا جاسکے۔ ورنہ قائد انقلاب
چےئرمین پاکستان تحریک انصاف جناب عمران خان کا مشن ناکامی سے دوچار
ہوگا۔

0

جمعیت علماء اسلام اور آل پاکستان مسلم لیگ کا خصوصی اجلاس

چترال(نمائندہ آواز) بلدیاتی انتخابات کے تیاریوں کے حوالے سے جمعیت
علماء اسلام اور آل پاکستان مسلم لیگ کا ایک اہم اجلاس گذشتہ شب چترال
میں منعقد ہوا جسمیں بلدیاتی انتخابات میں ممکنہ اتحاد پر بات چیت کی
گئی۔ انتہائی باوثوق ذرائع سے ملنے والے مصدقہ اطلاع کے مطابق اے پی ایم
ایل کی طرف سے جے یو آئی سے رابطہ کرنے کے بعد ہونے والا یہ خصوصی اجلاس
ضلعی صدر APML شہزادہ خالد پرویز کے انتہائی قریبی عزیز کے گھر میں منعقد
ہوئی جسمیں جے یو آئی کے ضلعی کابینہ کے اراکین اور اے پی ایم ایل کی طرف
سے رکن قومی اسمبلی شہزادہ افتخار الدین و دیگر شریک ہوئے۔ذرائع نے دعویٰ
کیا ہے کہ حال ہی میں جے یو آئی میں شامل ہونے والے سابق ایم پی اے حاجی
غلام محمد کی شدید خواہش ہے کہ چترال میں انکی موجودہ سیاسی جماعت جے یو
آئی بلدیاتی انتخابات کے حوالے سے انکے سابقہ جماعت اے پی ایم ایل کیساتھ
اتحاد کرے اور اس سلسلے میں وہ جے یو آئی میں اپنا بھرپور اثرورسوخ
استعمال کر رہے ہیں جسکی بناء پر اے پی ایم ایل کے حلقوں میں یہ امر
یقینی ہے کہ جے یو آئی کیساتھ انکا اتحاد ہو چکا ہے۔یہاں یہ امر قابل ذکر
ہے کہ صرف تین دن قبل جے یو آئی اور جماعت اسلامی کیطرف سے مشترکہ طور پر
جاری اعلامیہ میں بلدیاتی انتخابات کے حوالے سے اتحاد کا اعلان کیا گیا
تھا تاہم اس تازہ ترین صورتحال کے بعد مذہبی جماعتوں کے ممکنہ اتحاد کو
کتنے خطرات درپیش ہونگے۔اس کے بارے میں اب کچھ نہیں کہا جاسکتا۔ ذرائع کا
یہ بھی دعویٰ ہے کہ اسی طر ح کی سیاسی مشاوت جماعت اسلامی کی طرف سے بھی
مختلف پارٹیوں کے ساتھ منعقد ہوتے ہیں ۔